دنیا کی واحد عورت جسے بچہ پیدا کرنے کی اجازت نہیں.مریم نباتانزی کی زندگی کی کہانی

مریم نباتانزی کی عمر اس وقت 40 سال ہے۔ ان کی شادی 28 برس قبل 12 سال کی عمر میں ہوئی تھی۔ شادی کے بعد وہ 15 بار بچوں کو جنم دینے کے عمل سے گزری ہیں۔ اس دوران ان کے 6 بار جڑواں بچے، 4 بار تین بچے اور 5 بار چار بچے پیدا ہوئے۔ رپورٹس کے مطابق ڈاکٹرز نے مریم پر مزید

بچے پیدا کرنے پر پابندی عائد کر دی ہے۔ ڈاکٹرز کا یہ اقدام ان رپورٹس کے بعد سامنے آیا جب یہ خبریں سامنے آئیں کی مریم مزید ایک اور بچہ پیدا کرنے کی خواہش مند ہیں کیونکہ ان کے والد کے 45 بچے تھے تاہم انہوں نے کئی شادیاں کی تھیں جن سے ان کی اولاد تھی۔ ماہرین کے مطابق مریم حیرت انگیز طور پر ایسی جسمانی ساخت کی حامل ہیں کہ انہوں نے ہمیشہ ایک سے زائد بچوں کو جنم دیا۔ واضح رہے کہ یوگینڈا کی ان خاتون کے ہاں آخری بار چار سال قبل جڑواں بچوں کی پیدائش ہوئی تھی۔ اس وقت ان کی عمر 36 سال تھی جبکہ زچگی کے دوران ان کا ایک بچہ موت کا شکار ہو گیا تھا۔ مریم کے شوہر نے چار سال قبل انہیں چھوڑ دیا تھا جس کے بعد وہ اکیلے اپنے بچوں کی پرورش کرنے پر مجبور ہیں۔ اس وقت ان کے ساتھ

38 بچے رہتے ہیں۔ مریم کے مطابق جب ان کی شادی ہوئی تو ان کے شوہر کی عمر ان سے 28 سال زائد تھی اور اس وقت 40 سال کے تھے۔ ان کی شادی کے ایک سال بعد ہی 13 سال کی عمر میں ان کے جڑواں بچوں کی پیدائش ہوئی تھی۔ مردوں کی بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت بھی عمر کے ساتھ کم ہوتی ہے، لیکن مردوں کے لیے یہ کمی عورتوں کے مقابلے میں دیر سے شروع ہوتی ہے، اور اس کی رفتار بھی سست ہوتی ہے۔ مردوں میں بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت میں کمی 40-45 کی عمر کے قریب شروع ہوتی ہے۔ لیکن خواتین میں یہ کمی اصل میں کب شروع ہوتی ہے؟ اور اس کمی کی وجہ سے بچہ پیدا کرنے کی فطری صلاحیت ختم کب ہوتی ہے؟ ہزاروں برس سے عورتیں اور لڑکیاں، نو عمری اور 20 سے 21 سال کی عمر میں حاملہ ہو کر بچے پیدا کرتی آئی ہیں۔ بالکل ویسے ہی جیسے شمالی کروایشیا میں 30 ہزار سال پہلے بسنے والے کراپینا نئینڈرتھالز، جن کی باقیات سے پتہ چلتا ہے کہ وہ 15 سال کی عمر میں اپنے پہلے بچے کو جنم دیتے تھے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.