اونٹ س ا ن پ کیوں کھاتا ہے؟ وہ کون سی بیماری ہے جس کا علاج اونٹ سے کیا جا تا ہے؟

ہم لائے ہیں اونٹ کے متعلق ایک بہت ہی دلچسپ معلومات اس سے پہلے اگرآپ نے ان معلومات سے فائدہ اُٹھا نا ہے تو ان باتوں کو آپ نے بہت زیادہ غور سے سننا ہے تا کہ ان باتوں کی آپ کو سمجھ میں آسکے آپ نے اونٹ کو تو دیکھا ہی ہو گا۔ کیا آپ نے کبھی اس کی شکل و صورت پر غور کیا ہے؟

اونٹ کی ایک منفرد خصوصیت یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے اسے اپنی ایک خاص نشانی کے طور پر بیان فر ما یا ہے اس لیے ان آیات کا ترجمہ کچھ یوں ہے کیا یہ لوگ اونٹ کو نہیں دیکھتے کہ انہیں کیسے پیدا کیا گیا ہے؟ اور آسمان کو کیسے بلند کیا گیا؟ اور پہاڑوں کو کہ انہیں کس طرح گاڑھا گیا اور زمین کو کیسے بچھایا گیا۔ اللہ تعالیٰ نے اپنی چار بڑی نشانیوں کا ذکر کیا ہے اور غور طلب بات یہ ہے کہ آسمان زمین اور پہاڑ جیسی نشانیوں کا ذکر بعد میں فر ما یا اور اونٹ کو ان پر مقدم قرار دیا ہے۔ انسانوں کے لیے ان جانوروں میں کیا کیا فائدے ہیں جو دوسرے جانوروں میں نہیں ہیں اونٹ کی کوہان میں ایک منفرد چیز یہ ہے کہ دوسرے جانوروں مثلاً گائے بھینس وغیرہ میں کوہان جسم کے اگلے حصے میں ہے۔ جب کہ اونٹ کی کوہان پیٹھ کے وست میں ہو تی ہے اس کے تخلیقی اور سائنسی فوائد بے شمار ہیں اب آپ کو بتاتے ہیں کہ اونٹ س ا ن پ کیوں کھاتا ہے؟ اور اس کے بارے میں

فرمانِ نبوی ﷺ کیا ہے؟ س ا ن پ کا گ وشت اونٹ کی پسند یدہ غذا ہے اور اسے س ا ن پ کا گ وشت بے حد اشتیاق دیتا ہے تو اسے کھانا شروع کر دیتا ہے اور عجیب بات یہ ہے کہ وہ اسے کھانے کی ابتداء اس کی دُم سے کر تا ہے ۔ اور پھر آہستہ آہستہ اُسے پورا کھا جا تا ہے س ا ن پ کا گ وشت سخت گرم ہو تا ہے۔ جب اونٹ اسے کھا لیتا ہے تو اسے سخت پیاس لگتی ہے اور وہ پیاس بجھانے کے لیے کسی تالاب پر جا تا ہے اللہ نے اسے الہام کر رکھا ہے کہ اگر اس نے اس وقت پانی پیا تو س ا ن پ کا ز ہ ر اس کے جسم میں پھیل جا ئے گا لہٰذا وہ پانی کے تا لاب پر پہنچ کر بھی پانی نہیں پیتا۔ پھر زور زور سے ململانے لگتا ہے ایسا لگتا ہے کہ جیسے وہ کسی سخت مشکل میں ہو اور کسی کو اپنی مدد کے لیے پکار رہا ہو۔ اور اس کی آنکھوں سے آنسو بہنے لگ پڑتے ہیں۔ اللہ نے اس کے پپوٹوں کے نیچے دو چھوٹے چھوٹے گڑھے بنائے ہیں اس کے آنسو ان گڑھوں میں جمع ہو جا تے ہیں اور اس کے جسم میں پھیلا ہوا س ا ن پ کا ز ہ ر ان آنسوؤں کی مدد سے ان گڑھوں میں جمع ہو جاتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *