محرم سے پہلے ذی الحج کے آخری جمعرات اور جمعہ کا خاص وظیفہ

اللہ تعالیٰ نے قرآنِ کریم (سورة الفجر آیت نمبر ۲)میں ذی الحجہ کی دس راتوں کی قسم کھائی ہے (وَالْفَجْرِ وَلَیَالٍ عَشْرٍ) جس سے معلوم ہوا کہ ماہ ذی الحجہ کا ابتدائی عشرہ اسلام میں خاص اہمیت کا حامل ہے۔ حج کا اہم رکن: وقوفِ عرفہ اسی عشرہ میں ادا کیا جاتا ہے، جو اللہ تعالیٰ کے خاص فضل وکرم

کو حاصل کرنے کا دن ہے۔غرض رمضان کے بعد ان ایام میں اخروی کامیابی حاصل کرنے کا بہترین موقع ہے۔ لہٰذا ان میں زیادہ سے زیادہ اللہ کی عبادت کریں، اللہ کا ذکر کریں، روزہ رکھیں، قربانی کریں۔ احادیث میں ان ایام میں عبادت کرنے کے خصوصی فضا ئل وارد ہوئے ہیں، جن میں سے چند احادیث ذکر کررہا ہوں:حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلمنے ارشاد فرمایا: کوئی دن ایسانہیں ہےجس میں نیک عمل اللہ تعالیٰ کے یہاں ان دس دنوں کے عمل سے زیادہ محبوب اور پسندیدہ ہو۔حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہماسے روایت ہے کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلمنے فرمایا: اللہ تعالیٰ کے نزدیک عشرہٴ ذی الحجہ سے زیادہ عظمت والے دوسرے کوئی دن نہیں ہیں، لہٰذا تم ان دنوں میں

تسبیح وتہلیل اور تکبیر وتحمید کثرت سے کیا کرو حضرت قتادہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: عرفہ کے دن کے روزے کے متعلق میں اللہ تعالیٰ سے پختہ امید رکھتا ہوں کہ وہ اس کی وجہ سے ایک سال پہلے اور ایک سال بعد کے گناہوں کو معاف فرمادیں گے۔( صحیح مسلم) مذکورہ حدیث سے معلوم ہوا کہ عرفہ کے دن کا ایک روزہ ایک سال پہلے اور ایک سال بعد کے گناہوں کی معافی کا سبب بنتا ہے۔ لہٰذا نویں ذی الحجہ کے دن روزہ رکھنے کا اہتمام کریں۔اختلافِ مطالع کے سبب مختلف ملکوں میں عرفہ کا دن الگ الگ دنوں میں ہو تو اس میں کوئی اشکال نہیں؛ کیونکہ یوم عیدالفطر، یوم عید الاضحی، شبِ قدر اور یومِ عاشورہ کے مثل ہر جگہ کے اعتبار سے جو دن عرفہ کا قرار پائے گا، اُس جگہ اُسی دن میں عرفہ کے روزہ رکھنے کی فضیلت حاصل ہو گی،انشاء اللہ۔ اس ماہِ مقدس میں اللہ تعالیٰ نے ایک دن رکھا جسے عرفہ کا دن کہتے ہیں

ذی الحجہ کی دس راتوں کو اللہ نے قرآنِ پاک میں دس راتوں میں قسم کھا کر فر ما یا ہے اب ان دس راتوں کو انسان غافل ہو کر گزار لے تو پورا سال جو ہے وہ انسان غفلت کا شکار رہتا ہے دس راتوں کو آپ قیمتی بنا ئیں دس راتوں کا خاص عمل جو آپ کو بتلا نا مقصود ہے اگر یہ عمل کر لیں گے تو آپ کو بہت فائدہ ہونے والا ہے۔ آپ نے ہر دن سو مر تبہ سورۃ یٰسین کی تلاوت کر نی ہے۔ تلاو ت کرنے سے یہ ہوگا کہ جو آپ کو وظیفہ ہے وہ بھی مکمل ہو جا ئے گا اور آپ کی حاجات بھی مکمل ہو جا ئیں گی ذی الحج کے پہلے دنوں کی طرح ذی الحج کے آخری دن بھی بہت ہی برکت والے ہوتے ہیں اس لئے اس تحریر میں ذی الحج کے آخری جمعہ اور جمعرات کا وظیفہ بتایا جارہا ہے وظیفہ یہ ہے کہ ذی الحج کے آخری جمعہ اور جمعرات کے دن بعد نماز عصر سورہ یٰسین دو مرتبہ اول و آخر درود پاک کے ساتھ پڑھیں اور اس کے بعد آیت الکرسی کو بھی تین مرتبہ پڑھ لیں اور پھر اللہ سے رو رو کر عاجزی و انکساری سے گڑگڑا کر اپنی حاجات طلب کریں انشاء اللہ ضرور پوری ہوں گی۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.