زندگی کے بارے میں ایک بہت پاور فل آرٹیکل آپ کے دو منٹ آپ کے بیس سالوں کو بد ل دیں گے

سی امیر آدمی کے پاس بہت بڑا شیر تھا۔ جس پر بیٹھ کر وہ اکثر سمندر کی سیر کرنے جایا کرتا تھا۔ ایک دن وہ ساحل سمندر پر پہنچا۔ اس نے ایک فیش مین کو دیکھا ۔ جو بڑے آرام سے اپنی کشتی کے اندر لیٹا ہوا تھا تم مچھلیاں کیوں نہیں پکڑ رہے۔ اس آدمی نے پوچھا ۔ کیونکہ میں نے آج کے دن کی مچھلیاں پکڑلی ہیں۔

ابھی تو آدھا دن پڑا ہوا ہے۔ تم کچھ اور مچھلیاں کیوں نہیں پکڑلیتے۔ لیکن میں ان کو کیا کروں گا؟ تم انہیں بیچ کر زیادہ پیسے کما پاؤ گے۔ ان پیسوں سے تم اپنی کشتی کی موٹر صیحح کروا سکتے ہو۔ اپنی کشتی کو بنوا سکتے ہو۔ تمہاری کشتی مضبوط ہوگی۔ تم گہرےپانیوں میں جا سکوں گے۔ جہاں تم اور زیادہ مچھلیاں پکڑ پاؤ گے۔ پھر تمہارے پاس اتنے پیسے ہوجائیں گے۔ تم مچھلیاں پکڑنے والا جا ل خرید لینا۔ اس جا ل سے تم زیادہ مچھلیاں پکڑ پاؤ گے۔ اور تمہارے پاس زیادہ پیسے ہوجائیں گے۔ اس طرح تم محنت کرتے رہو گے تو جلد ہی ایک نئی کشتی خرید پاؤ گے۔ ہوسکتا ہے کہ تم زیادہ کشتیاں بھی خرید سکتے ہو۔ پھر تم میری طرح امیر بن جاؤ گے۔ پھر میں کیا کرو گے؟ فش مین نے پوچھا۔ پھر تم اصل میں اپنی زندگی کو انجوائے کر پاؤ گے۔ اپنی زندگی کا مزہ اٹھا پاؤ گے۔ اپنی مرضی سے اپنی زندگی گزار سکو گے۔ سر آپ کو کیا لگتا ہے ؟ کہ اب میں کیا کررہاہوں؟ فش مین نے جواب دیا۔

ہم میں سے بہت سے لوگ بہت زیادہ پیسا کماناچاہتے ہیں تاکہ وہ بہتر اور اچھی زندگی گزار سکیں۔ میں ایک با ر اچھا خاصا پیسا کمالوں ۔ پھر میں آرام سے اپنی مرضی کے مطابق زندگی گزاروں گا۔ ان کی یہ سوچ ہوتی ہے۔ اور اسی خواب کے پیچھے بھاگتے بھاگتے ہم اپنے خوبصورت دن ضائع کردیتے ہیں۔ ہم اپنے کل کی تلاش میں اپنے آپ آج کو کھو دیتے ہیں۔ یہ ایک بہت بڑی غلطی ہے۔ زندگی آج میں جینے کا نام ہے۔ لوگ اپنی زندگی کا ایک بہت بڑا حصہ کام کرتے کرتے گزاردیتے ہیں۔ اور انہیں پتہ نہیں ہوتا کہ وہ اتنا کام کس لیے کررہے ہیں۔ اس بات میں کوئی شک نہیں کہ پیسے کی زندگی میں بہت اہمیت ہے۔ پیسا زندگی کی ضرورتوں میں سے ایک ہے۔ پیسے سے بہت سی چیزیں خریدی جاسکتیں ہیں۔ لیکن یہ بات یقین کے ساتھ درست ہے کہ ہر چیز کو پیسے سے نہیں خریدا جاسکتا۔ گزرا ہوا وقت کبھی بھی پیسے سے نہیں خریدا جاسکتا۔ اس لیے زیادہ پیسوں کے چکر میں اپنے آج کو کبھی نہ بھولیں۔ اپنے آج کی خوشیوں کو برباد نہ کریں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.