ایک پرانے بزرگ نےنصیحت کی کہ

کچھ لوگ اپنی دنیا کی زندگی کو مصنوعی جنت بنانے کےلیے اپنےاردگرد موجود ہر شخص کی زندگی کو جہنم بنا دیتے ہیں۔ پھر جس نے دنیا میں مصنوعی جنت کو پانے کےلیے منافقت دھوکے جھوٹ اور فریب کا سہارا لیا وہ آخرت میں اصل جنت سے محروم کردیاجائےگا۔ دولت دنیا کی ہو یا ایمان کی جتنی

بڑھتی جائے گی اتنی نیند کم ہوتی جائےگی۔ جھوٹے شخص سے کبھی بھی بحث نہیں کرنا چاہیے آپ اس سے کبھی بحث جیت نہیں سکتے کیونکہ اسے اپنے جھوٹ پر آپ کےسچ سے بھی زیادہ یقین ہوتا ہے۔ خاموشیاں کبھی بے وجہ نہیں ہوتی کچھ درد ایسے بھی ہوتے ہیں جو آواز چھین لیتے ہیں۔ خوشیاں پرائی ہوتی ہے۔ سب میں بانٹ دی جاتی ہے۔ درد صرف اپنے ہوتے ہیں۔ جو دل میں رکھنے پڑتے ہیں۔ اگر تمہیں لگے کہ تمہارا امتحان لیا جارہا ہے۔ تو خوش ہوجاؤ کہ تم اس قابل سمجھے گئے ہو کیونکہ اللہ تعالیٰ کےہاں امتحان عاشق کا لیا جاتا ہے۔ منافق کا نہیں۔ کسی کی بے بسی مت ہنسو یہ وقت تم پربھی آسکتا ہے۔ دنیا میں سب سے خطرناک اور بزدل انسان وہ ہے جو آپ کے پیچھے آپ کی برائی کرتے ہیں۔ اور سامنے آکر خوشامد کرتے ہیں۔ لوگ

ہمیں لوگوں کے خلات کرکے خود انہیں لوگوں سے دوستیاں پال لیتےہیں۔ جب اکڑ شدید ہوتی ہے۔ تب پکڑ بھی شدید ہوتی ہے۔ چار خوبیاں انسان کو باکمال بنا دیتی ہے۔ ٹھنڈا دماغ ، میٹھی زبان، نرم دل ، چہرے پر مسکراہٹ۔ایک دانہ کسی نے پوچھا ہم ایسا کیا کریں ؟ کہ سب کی نظروں میں اچھے بن جائیں دانہ نے جواب دیا اس دنیا میں اگر کوئی فرشتہ بھی بن جائے تب بھی اسے برا کہنے والے موجود ہوتے ہیں۔ خدا کو ناراض کرکے لوگوں کو راضی نہ کرو کیونکہ لوگوں کے بدلے دوسرے لوگ مل سکتے ہیں۔ مگر خدا کے بدلے دوسرا خدا نہیں مل سکتا۔ سازشیں ، غیبتیں پیٹھ پیچھے وار لوگ بھول بیٹھے ہیں۔ کہ یہ سارا تماشہ اللہ تعالیٰ بھی دیکھ رہا ہے۔ اپنی خوشی کےلیے کسی دوسرے کی خوشی خاک میں مت ملاؤ تمہاری وحشی بے کار ہے۔ جس

کے پیچھے کسی کے آنسو ہوں۔ جب چھوٹے تھے تو کپڑے میلے اور دل صا ف ہوتے تھے اب بڑے ہونے کےبعد کپڑے صاف اور دل میلے ہوتے ہیں۔ درد کو مسکرا کرسہنا کیا سیکھ لیا سب نے سمجھ لیا مجھے تکلیف ہی نہیں ہوتی۔ ہمیشہ دوسروں کے جذبات کا خیال رکھیں کیونکہ بعض اوقات آنسو کا مطلب خوشی اور مسکراہٹ کا مطلب دردہوتا ہے۔ مجھے ان لوگوں کی پرواہ نہیں جو میرے دشمن ہیں محتاط میں ان لوگوں سے رہتاہوں۔ جو میرے ساتھ رہتے ہوئے ذہن میں بغض اور نف رت رکھتے ہیں۔ کسی اور کی طرح بننے سے بہتر ہے کہ تم اپنی ایک الگ پہچان بناؤ۔ تجربے سے ثابت ہوا کہ مشکل وقت میں صرف پختہ ارادہ ہی مدددیتا ہے۔ کھٹکھٹا ؤ اور وہ دروازہ کھول دے گا۔ مٹ جاؤ اور وہ تمہیں سور ج کی طرح چمکادے گا گرجاؤ وہ تمہیں آسمانوں کی بلندی جتنا اٹھا دے گا کچھ بھی نہ رہو اور تمہیں سب کچھ بنا دے گا۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *