ذوالحج کے پہلے 10دنوں میں کبھی بھی 2 رکعت نفل اس طرح پڑھو

آج کا یہ وظیفہ خاص آپ کو بتانا جارہے ہیں۔ جو کہ ذی الحج کےحوالےسے ہے ۔ جو آپ کی تمام پریشانیوں اور مشکلا ت کا حل ہے۔ اللہ تعالیٰ نے ذی الحج کے پہلے عشرہ کی دس راتوں کی قسم کھائی ہے ہر رات کی قسم کھائی ہے۔ دوراتیں ایسی ہیں ۔ جن کو اللہ تعالیٰ نے خاص مبارک رکھا ہے۔

یہ دونوں عیدوں کی راتیں ہیں۔ یعنی لیلتہ النداءیعنی عیدالفطر کی جو چھوٹی عید کی رات ہوتی ہے۔ جس کی صبح عید ہوگی ایک وہ رات ہے۔ اور دوسری اس عید کی رات جو بڑی رات ہوتی ہے جو عید الاضحیٰ کی رات ہوتی ہے۔ ہمارےاللہ پاک نے دس راتوں کی قسم کھائی ہے۔ جو بندہ ان دس راتوںمیں اللہ کوراضی کرے گا۔ ان دس راتوں کو روشن کرےگا۔ آپ چاہیں کچھ نہ کریں۔ آپ نے ان دس راتوں میں عشاء کی نماز باجماعت ادا کرکے اور اس کے بعد کچھ نہ کرے ۔صرف دو رکعت صلوۃ التوبہ کی ادا کرے۔ اور اللہ تعالیٰ کو راضی کرلے۔ اب یہ جو دس راتیں ہیں۔ جس حوالےسے ایک بات تو یہ ہے کہ آج کی امت کو آج کے حالات کے مطابق ت وبہ کی اشد ضرورت ہے۔ معافی کی اشد ضرورت ہے۔ اللہ تعالیٰ سے دعاکرنی چاہیے۔ اللہ تعالیٰ سے رورو کر، گڑ گڑا کر اپنے گن اہوں کی معافی مانگنی چاہیے۔ اور اسکےساتھ ساتھ آپ نے دو رکعات صلوۃ التوبہ کی ادا کرنی ہے۔ اگر کر سکیں تو دس کی دس راتوں میں کریں۔ بہت بہتر ہے۔ یا پھر آپ کسی بھی ایک رات کرلیتے ہیں۔ تو یہ بھی بہتر ہے۔ کیونکہ اللہ تعالیٰ نے ان دس راتوں

کی قسم کھائی ہے۔اللہ پاک نے ان راتوںمیں جو برکتیں اور فضیلتیں رکھی ہیں ۔ وہ مالک ہی جانتا ہے۔ یہ خیروعافیت کی راتیں ہیں۔ جو شخص ان راتوں میں ت وبہ کر لیتا ہے۔ تو اللہ تعالیٰ ان راتوں کی عبادتوں کے صدقے آپ کو نواز دیتا ہے۔ جیسا کہ رمضان کا آخری عشرہ اور ذی الحج کا پہلا عشرہ بہت ہی اہم ہیں۔ ابھی عید الحج کا پہلا عشرہ ہے اس میں صرف دو رکعات نفل پڑھ لیں۔ آپ نے نیت ت وبہ کی کرنی ہے۔ ان دس راتوں میں دو رکعتیں نفل پڑھ کر اسکے خیروبرکت کے خزانوں میں سے مانگیں۔ انشاءاللہ! اللہ تعالیٰ اپنے خزانوں میں بندوں کو نوازتا ہے۔ حدیث شریف کا مفہوم ہے کہ ایمان کے بعد سب سے قیمتی چیز عافیت ہے۔ آج آپ کو روٹی مل رہی ہے۔ اور ملتی رہے گی۔ اللہ نہ کرے کل کو آپ کو کرائسز کا جھٹکا لگے۔ آج لکھ پتی ہیں۔ کل ککھ پتی ہیں۔ آج آپ کے پاس ہے۔ کل آپ کے پاس نہیں ہے۔ جب آپ کے اچھے دن جاتے ہیں۔ تو پھر بندہ برباد ہوجاتا ہے۔ پھر بندہ بیماریوں میں، مشکلات میں، مصیبتوں میں اور گھریلو مشکلات میں پھنس جاتا ہے۔ تو آپ ان دو رکعتوں کا وظیفہ ان دس راتوںمیں کریں۔ کسی بھی وقت یا کسی بھی دن کرلیں۔ایک تو نماز کی پابندی کریں۔ اور روزانہ نماز عشاء کے بعد دو رکعات نماز ت وبہ پڑھ لیں ۔ اور اس نماز کے بعد اللہ تعالیٰ سے عافیت مانگیں۔ کیونکہ عافیت سے اللہ تعالیٰ آپ کو خزانوں میں سے دےگا۔ کیونکہ اس کے خزانوںمیں کسی چیز کی کمی نہیں ہے۔ جب آپ اس سے مانگیں گے۔ تو آپ کی تمام مشکلات حل ہوجائیں گی۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *