قرآن پاک کی 1 ایسی سورت جسے پڑھ کر پتھر پر پھونک مارو

قرآن پاک کی ایسی سورت مبارک آج آپ کو بتانے جارہے ہیں کہ جس کی تلاو ت کرکے ، جس کو پڑھ کر اگر پتھر بھی پھونک ماردی جائےتو وہ پتھر کو بھی سونا بنادیتی ہے۔ جو سورت مبارکہ پتھر کو سونا بنا دے ۔ کیا وہ آپ کا ہر مقصد پورا نہیں کرسکتی۔ آپ کی حاجت کوپورا نہیں کرسکتی۔ آپ کے مشکل

کاموں میں آسانیاں پیدا نہیں کرسکتی۔ ضرور کرسکتی ہے۔ بس ہمارا پورا یقین ہونا چاہیے۔ پورا ایمان ہونا چاہیے کہ اللہ تعالیٰ کے کلا م میں بڑی طاقت ہے۔ بڑی پاور ہے۔ اورو ہ ہماری طرح کی پریشانیوں کو آسانیوںمیں بدل سکتی ہے۔ قرآن پاک میں اللہ تعالیٰ نےخود فرمایا ہے کہ قرآن رحمت اور شفاء ہے۔ آج ہمارا کیاحال ہے؟ ہم بیماریوں کےلیے ڈاکٹروں کےپا س تو چلے جاتے ہیں۔ لیکن قرآن کو کھول کر نہیں دیکھتے۔ ہم اپنی پریشانیوں کے باوجود ، دکھوں اور غمو ں کے باوجود، بڑے بڑے عاملوں کےپاس تو چلے جاتے ہیں۔ لیکن قرآن کھول کر نہیں دیکھتے۔ ہمارا کوئی بھی مقصد پورا نہ ہورہا ہو۔ کوئی بھی حاجت پوری نہ ہورہی ہو۔ کوئی بھی کام پورا نہ ہورہا ہو۔ ہم لاکھوں روپے دینے کو تیار ہوجاتے ہیں۔ لیکن کبھی قرآن کھول کر نہیں دیکھتے۔ آج آپ کو ایک ایسی سورت مبارکہ بتانے جارہے ہیں ۔ جو بہت مشہور اور بہت ہی زیادہ فضیلت والی ہے انشاءاللہ! اس کے فائدے اور معجزات کے بارے میں

سن کر آپ اس سورت مبارکہ کی ضرورتلاوت کریں گے۔ اور اللہ تعالیٰ آپ کو ہرمقصد میں کامیابی عطافرما دیں گے ۔ جس سورت کے بارے میں بتانے جارہے ہیں۔ وہ سورت مبارکہ “سورت المزمل ” ہے۔ سورت المزمل مکہ مکرمہ میں نازل ہوئی۔ مزمل کا معنی ہے چادر اوڑھنے والا۔ اس کی سورت کی پہلی آیت میں اللہ تعالیٰ نے اپنے حبیب حضوراکرم ﷺ ” یا یھا المزمل ” فرما کر ندا کی ہے ۔ اور اسی وجہ سے اس سورت مبارکہ کو ” سورت المزمل ” کہتے ہیں ۔ بڑے بڑے بزرگان دین فرماتے ہیں۔ احادیث مبارکہ میں بھی آتا ہے جو اس سورت کو متواتر پڑھے گا۔ وہ ہمیشہ اللہ تعالیٰ کی پناہ میں رہے گا۔ اور کوئی اس کے نزدیک نہیں ہوگا۔ دینی اور دنیاوی آفات سے محفوظ رہے گا۔ بادشاہوں اور بزرگوں کی نظر میں عزیز ہوگا۔ جو شخص اس سورت کو دن یا رات کے وقت ایک مرتبہ پڑھےگا۔ اللہ تعالیٰ فرشتوں کو فرمائے گا کہ گواہ رہنا کہ میں اس بندے کو بخشتا ہوں۔ اوراپنا دوست بناتا ہوں۔ اور تمام

دشمنوں پر اسے منظور بنا تا ہوں۔ جوشخص اس سورت کو پڑھ کر پتھر پر دم کرے۔ تو اسے بھی سونا بنا دیتی ہے۔ ایک مرتبہ حضرت شیخ عبدا للہ بن مبارک ؒ ان کو کسی خطاط کےبدلے میں بغداد میں قید کردیاگیا۔ مدت کےبعد جب خلیفہ کے روبرو لائے گئے۔تو خلیفہ نے کہا اگر آپ واقعی درویش ہیں۔ تو جو پتھر آپ کےپاس پڑا ہے۔ دعا کریں کہ یہ سونےکا ہوجائے۔ پھر میں تمہیں رہا کردوں گا۔ تو اللہ تعالیٰ ان درویش نے ان بزرگ کہیں تفسیر میں ، احادیث میں پڑھاتھا کہ اگر سورت المزمل کو پڑھ کر پتھر پر پھونک دی جائے تو وہ سونا بن جاتا ہے۔ تو فوراً آپ نے سورت المزمل شریف پڑھ کر پتھر کر پھونک ماری۔ فرمان الہیٰ سے وہ پتھر سونابن گیا۔ اور خلیفہ یہ کرامت دیکھ کر حیران رہ گیا۔ جو شخص اس سورت کو ایک مرتبہ پڑھ لے۔ تو اس پر کوئی مصیبت نازل نہیں ہوتی۔ لوگوں اور بارگاہ الہیٰ میں وہ معزز ہوجاتا ہے۔ دنیا کا جیسا مقصد ہو یا حاجت ہو ۔ صرف ایک مرتبہ سورت المزمل پڑھ کر اللہ تعالیٰ سے اسی وقت دعا مانگ لی جائےتو۔ اللہ تعالیٰ آپ کی دعا کوقبول فرما کر آپ کو مقصد میں کامیابی عطافرمادیتاہے۔ اس سورت کو پڑھنے والے ز ہ ر ، جادو اور بلاؤں کااثر نہیں ہوتا۔ وہ تمام بلاؤں سے محفوظ رہتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *