چار قدرتی غذائیں جنہیں کھانے سے حاملہ خواتین کا حمل ضائع ہوجاتا ہے

بیشتر اسقاط حمل اس وقت رونما ہوتے ہیں جب پیٹ میں موجود بچے میں نقص ہوں یا یوٹرائن کا ماحول بچے کی نشوونما کے لیے غیر موزوں ہو۔کچھ جڑی بوٹیاں یا ادویات حمل کو متاثر کر سکتی ہیں تاہم، یہ کہنا مشکل ہے کہ اسقاط حمل براہ راست ان ادویات کا سبب ہوتا ہے کیونکہ اسقاط حمل بذاتِ خود

بہت عام بات ہے۔ لہذا، جیسے ہی خاتون کو اپنے حمل کا علم ہو، غیر ضروری ادویات یا جڑی بوٹیاں کھانے سے گریز کرے۔حمل جسمانی مشقت جیسا کہ تیراکی، ڈانس، جم میں ورزش یا یوگا کرنے سے ختم نہیں ہوتا۔بشرطیکہ کھانا بیکٹریا سے آلودہ نہ ہو۔ خواتین میں کھانے کے باعث حمل شاذوناذر ہی گرتا ہے۔معمول کی ج ن سی سرگرمیاں جیسا کہ لاڈ پیار اور قربت کا کوئی نقصان نہیں اور یہ اسقاطِ حمل کا سبب نہیں بنتی۔گر جانے والے حملوں میں سے بیشتر حمل پہلے 6 سے 12 ہفتوں یا اس سے بھی پہلے گر جاتے ہیں۔کچھ خواتین میں ش رم گاہ سے بل۔ڈ کا اخراج سامنے آتا ہے اور شاید پیٹ میں درد کی شکایت بھی کرتی ہیں۔دیگر خواتین میں یوٹ رس سے مواد غیر متوقع حد تک بڑھ جاتا ہے جس سے زیادہ ب۔لڈ نکلتا ہے اور درد رہتا ہے۔ایسی خواتین بھی ہوتی ہیں جن میں کوئی بھی علامت سامنے نہیں آتیں اور مسئلے کا علم طبی معائنے کے دوران ہوتا ہے۔حمل کا ضائع ہونا ایک عام پایا جانیوالا مسئلہ

ہے جو بہت سے جوڑوں کو اولاد سے محروم رکھتا ہے اگرچہ اس کیوجہ بللکل طبی ہوتی ہے مگر کچھ غذاؤں کی بد احتیاطی بھی اس کا سبب بن جاتی ہے ۔ وٹامن سی کی بہت زیادہ مقدار استعمال کرلی جائے تو حمل ضائع ہونے کا خدشہ ہوتا ہے ۔ عام طور پر یہ خط۔رہ حمل کے پہلے چار ہفتے کے دوران ہوتا ہے ۔ فوڈ سپلیمنٹ کے ذریعے وٹامن سی کا زیادہ استعمال حمل کیلئے خط۔رناک ہوسکتا ہے ۔ دار چینی رحم مادر کیلئے ایک قدرتی محرک کی حیثیت رکھتی ہے اگر دارچینی زیادہ مقدار میں کھالی جائے تو حمل ضائع ہونے کا سبب بن سکتی ہے ۔ بعض اوقات درد سے بچنے کیلئے اس کا استعمال کیا جاتا ہے مگر زیادہ مقدار خط۔رناک ثابت ہوسکتی ہے ۔ اجوائن عام استعمال کی چیز ہے لیکن اگر اس کا استعمال زیادہ مقدار میں کیا جائے تو حمل کو نقصان دیتی ہے ۔ حاملہ خواتین میں اجوائن کے بکثرت استعمال سے تولیدی اعضاء میں انفیکشن کا خط۔رہ بڑھ جاتا ہے جو بعض صورتوں میں جان لیوا ثابت ہوسکتا ہے ۔ایک بوٹی ہے جسے کو باش بوٹی کہتے ہیں جو اسقاط حمل کا سبب بن سکتی ہے یہ دو قسم کی ہوتی ہے نیلی کو باش اور کالی کوباش اسقاط حمل کے حوالے سے کالی کوباش کو زیادہ خط۔رناک سمجھا جاتا ہے ۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *