اگر عورت یہ میٹھی چیز شوہر کو کھلا دے تو ایک دن کے عمل سے ہی شوہر بیوی کا دیوانہ ہوجائیگا

آپس میں پیار محبت سے رہنا خوش اخلاقی سے ایک دوسرے کا ساتھ پیش آنا خواہ وہ اپنے رشتہ دارہوں دوست احباب جن کو آپ بلکل نہیں جانتے ان سے بھی بات ہوجائے تو اخلاق ومحبت سے بات کرنی چاہیے ۔ ایک دفعہ آپﷺ نے صحابہ کرام ؓ سے فرمایا کیا میں آپ کو ایسی چیز نہ بتاؤں جو نماز ، روزہ ، حج

اور جہاد سے بھی زیادہ افضل ہے صحابہ کرام ؓ ایک دم متوجہ ہوگئے کہ اتنی اونچی واعلیٰ چیز کیا ہے صحابہ کرام ؓ نے عرض کیا یا رسول اللہ ﷺ ضرور بتائیے آپﷺ نے فرمایا آپس کا پیار سلوک خوش خلقی اورمحبت یہ بہت اعلیٰ چیز ہے ۔ آج نفرتیں ،لڑائی جھگڑے ہر گھر میں ہیں یہ بہت خطرناک اور ہلاک کرنے والی چیزیں ہیں۔ آپس کا پیار وسلوک آپﷺ نے فرمایا اس کی زندگی میں بھی برکت ہوجاتی اور اس کی زندگی پاکیزہ اور نورانی ہوجاتی ہے ۔ جو معاشرے کی صورتحال ہے جس طرح ناراضگیاں اور لڑائی جھگڑے چل رہے ہیں آپ کا قریبی دوست آپکا والد ہی کسی وجہ سے ناراض ہوگیا ۔اس کیلئے ایک مختصر سا وظیفہ ہے یااللہُ،یاسلامُ یہ 313مرتبہ پڑھ کر کسی میٹھی چیز پر دم کردیں ۔اب ظاہر ہے جس شخص سے آپکی ناراضگی ہے وہ آپکے ہاتھ سے کھائے گا نہیں اگر کوئی ایسی صورت ہے کہ آپ کے ہاتھ سے کھا لیتا ہے تو ٹھیک ورنہ کسی کے ذریعے اس کو کھلا دیں۔ایک دفعہ کے کھلانے سے اللہ تعالیٰ اس کے دل کے اندر نفرت کو دور کرکے محبت ڈال دیں گے لیکن اس میں شرط یہ ہے کہ آپکا یقین پختہ ہونا چاہیے ۔ مسلسل پختہ یقین رکھنا ہے اس یقین سے کریں گے تو انشاء اللہ وہ نفرت محبت میں بدل جائیگی ۔

ایک اور حدیث مبارکہ میںآیا ہے کہ حضرت ابوبکر بزار ،حضرت انسؓ سے روایت کرتے ہیں کہ عورتوں نے حضور اکرم سے عرض کیا کہ ساری فضیلت تو مرد لوٹ لے گئے، وہ جہاد کرتے ہیں اور اللہ کی راہ میں بڑے بڑے کام کرتے ہیں۔ ہم کیا عمل کریں کہ ہمیں بھی مجاہدین کے برابر اجر مل سکے؟ آپ نے فرمایا”جو تم میں سے گھر میںبیٹھے گی وہ مجاہدین کے عمل کو پالے گی“ مجاہدین اللہ کی راہ میں مصائب و تکالیف برداشت کرتے ہیں ،گھر کے آرام و سکون کو ترک کرکے دن رات یکسو ہوکر جہاد کرتے ہیں۔ ہجرت کرکے وطن سے دور ہوتے ہیں۔ گھر میںٹک کر رہنے والی عورت اعلیٰ مقام حاصل کرتی ہے۔ ایک اور روایت جو بزار اور ترمذی نے حضرت عبداللہ بن مسعودؓ سے نقل کی ہے، نبی پاک کا ارشاد ہے”عورت مستور رہنے کے قابل چیز ہے، جب وہ نکلتی ہے تو شیطان اس کو تاکتا ہے اور اللہ کی رحمت سے قریب تر وہ اس وقت ہوتی ہے جب وہ اپنے گھر میں ہو“ آج عورت بن ٹھن کر نکلتی ہے اور زیب و زینت دکھاتی ہے۔ چست و عریاں لباس پہنتی ہے۔ مردوں کو اپنی طرف راغب کرتی ہے۔ یہ ممنوع ہے۔رسول کریم نے فرمایا 3 کام جاہلیت کے ہیں ،دوسروں کی نیت پر طعن کرنا، ستاروں کی گردش سے فال لینا اور مُردوں پر نوحہ کرنا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.