دارچینی غریبوں کی انسولین کیوں کہلاتی ہے ؟

دنیا میں پائے جانے والے درختوں کی ایک قسم جنس دارچینی کہلاتی ہے اور انہی درختوں کی چھال کو ’دارچینی‘ کہا جاتا ہے۔دارچینی کا شمار دنیا بھر میں استعمال ہونے والے معروف ترین مصالحہ جات میں ہوتا ہے۔دارچینی ذائقے کے لحاظ سے شیریں لیکن زبان پر چبھنے والی ہوتی ہے۔ اس کی رنگت ہلکی سیاہی مائل ہوتی ہے

اور یہ زیادہ ترپاکستان، بھارت، سری لنکا، چین اور افریقہ کے مختلف علاقوں میں کاشت کی جاتی ہے۔دارچینی ادویات میں بھی استعمال کی جاتی ہے، زمانہ قدیم میں عرب کے لوگ اس کی تجارت سے مالا مال ہو جاتے تھے۔اس کی مختلف اقسام ہیں جو اپنی جسامت اور رنگت کے لحاظ سے ایک دوسرے سے ذرا مختلف ہوتی ہیں۔ جدید تحقیق سے یہ ثابت ہوچکا ہے کہ عمومی امراض کے علاوہ دارچینی سے شوگر کے مریضوں کو بھی بہت فائدہ ہوتا ہے، جس کیلئے روزانہ صرف چند گرام دارچینی کا سفوف باقاعدگی سے استعمال کرنا کافی رہتا ہے۔دارچینی کا مزاج گرم اور خشک ہوتا ہے جبکہ کھانوں کو لذیذ بنانے میں اس کا کوئی ثانی نہیں۔ جس کھانے میں دارچینی استعمال کی جائے وہ نہ صرف ذائقہ دار بلکہ خوشبودار بھی ہوجاتا ہے۔ دارچینی کا کھانوں میں استعمال اس بات کی ضمانت ہے کہ آپ صحت مند رہیں گے کیونکہ یہ بہت سی بیماریوں میں بے حد مفید ہے۔اس کا ایک بڑا مگر غیر معروف فائدہ یہ ہے کہ اسے کھانوں میں استعمال کرنے سے کھانے خراب ہونے سے بچ جاتے ہیں جس کی وجہ یہ ہے کہ اس کے استعمال سے کھانوں میں کئی قسم کے جراثیم (بیکٹیریا) کی افزائش میں کمی واقع ہوجاتی ہے۔ دارچینی کے چند فوائد درج ذیل ہیں۔دار چینی میں پائے جانے والے کیمیائی اجزا:ایک تحقیق کے مطابق 26مسالوں میں جب اینٹی آکسیڈنٹس کی موجودگی کا مقابلہ ہوا تو دار چینی واضح طور پر فاتح قرار پائی، یہاں تک کہ اس نے سپر فوڈ کہلائے

جانے والی ادرک کو بھی پیچھے چھوڑ دیا۔ دارچینی ایسے اینٹی آکسیڈنٹس جیسے کہ پولی فینولز سے بھرپور ہوتی ہے جوہمارے لیے فائدہ مند ہوتے ہیں۔ اس کے علاوہ دار چینی فائبر سے بھرپوربھی ہوتی ہے، جس کے ہر 100 گرام میں تقریباً 53 اعشاریہ 3 گرام فائبر ہوتا ہے۔ اس میں آئرن اور کیلشیم بھی پایا جاتا ہے۔ہمارے جسم میں مضر اجزا وافر مقدار میں موجود ہوتے ہیں، جن کے خلاف جدوجہد کرنے کے لیے ہمیں اینٹی آکسیڈنٹس کی ضرورت ہوتی ہے، جو دراصل ایسے مالکیولز کو پیدا ہونے سے روکتے ہیں جو ہمارے جسم کے لیے نقصان دہ ہوتے ہیں۔ دارچینی ایسے اینٹی آکسیڈنٹس جیسے کہ پولی فینولز سے بھرپور ہوتی ہے جوہمارے لیے فائدہ مند ہوتے ہیں۔دارچینی میں موجود ایسینشل آئل شہد کے ساتھ ملا کر ہائیڈروجن آکسائیڈ بناتاہے جو جسم میں جراثیم یا فنگس بڑھنے سے روکتا ہے۔دن کا آغاز دارچینی کے اس قدرتی نسخے سے کرنے سے آپ کا جسم انسولین کو بہتر ردعمل دینا شروع کردیتا ہے اور اس کے نتیجے میں بلڈ شوگر کا لیول متوازن ہوجاتا ہے۔ صبح سویرے نہار منہ پسی ہوئی دار چینی کا ایک چمچ استعمال کر لیں تو ہاضمے سے لے کر دل کی بیماریوں تک کئی طرح کے مسائل سے تحفظ مل سکتا ہے۔ بلڈ پریشر اور کولیسٹرول کے مریضوں کے لیے شہد اور دارچینی بے حد مفید ہے۔ شہد کا ایک چھوٹا چمچ لے کر اس میں چھوٹا چمچ دارچینی پاؤڈر ملادیں اور اس مرکب کو آدھے گلاس پانی میں گھول کر پی جائیں۔ اس سے آپ کا کولیسٹرول لیول کم رہے گا۔سردیوں کے موسم میں کھانسی میں مبتلا افراد ایک بڑا چمچ شہد نیم گرم پانی میں ایک چوتھائی چمچ دارچینی پاؤڈر کیساتھ ملا لیں۔ اس کو تین دن مسلسل استعمال کریں، اس سے آپ کی کھانسی بھی ٹھیک ہو جائے گی اور سردی کا مسئلہ بھی دور ہو جائے گا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.