کشمش کو صرف 10 دنوں تک اس طرح استعمال کریں

کشمش کو 10دنوں تک صرف اس طریقے سے استعمال کریں، گھوڑوں جیسی طاقت نہ آجائے تو پھر کہنا ۔۔ طریقہ استعمال جانیں کشمش کو تو آپ نے دیکھا ہی ہوگاجو کہ انگور خشک کرکے بنائی جاتی ہے اور اس کی رنگت گولڈن، سبز یا سیاہ ہوسکتی ہے۔ یہ مزیدار میوہ عام استعمال کیا جاتا ہے مگر کیا آپ

کو معلوم ہے کہ اگر اسکا روز استعمال کیا جائے تو آپ کیا فائدہ حاصل کرسکتے ہیں؟اگر نہیں تو ضرور جان لیں۔فائبر سے بھرپور ہونے کے ساتھ ساتھ کشمش میں ٹارٹارک ایسڈ بھی شامل ہوتا ہے جو ہلکے جل۔اب جیسا اثر دکھاتا ہے۔ ایک تحقیق کے مطابق آدھا اونس کشمش روزانہ کا استعمال کرنے والے افراد کا نظام ہاضمہ دوگنا تیزی سےکام کرتا ہے۔ کشمش آئرن سے بھرپور میوہ ہے،جو خ۔ون کی کمی دور کرنے کے لیے اہم ترین جز ہے،کشمش کو آسانی سے دلیہ، دہی یا کسی بھی میٹھی چیز میں شامل کرکے کھایا جاسکتا ہے بلکہ ویسے کھانا بھی منہ کا ذائقہ ہی بہتر کرتا ہے۔ تاہم ذیابیطس کے شکار افراد کو یہ میوہ زیادہ کھانے سے گریز کرنا چاہئےیا ڈاکٹر کے مشورے سے ہی استعمال کریں۔ کشمش میں موجود اینٹی آکسائی۔ڈنٹس وائرل اور بیکٹریا سے ہونے والے انفیک۔شن کےنتیجے میں بخار کے عارضے کا علاج بھی فراہم کرتے ہیں۔کشمش میں پوٹاشیم اور میگنیشم ہوتا ہے جو کہ معدے کی تیزابیت میں کمی لاتے ہیں، معدے میںتیزابیت کی شدت بڑھنے سے جلدی امراض، جوڑوں کے امراض، بالوں کا گرنا، امراض قلب اور کینسر تک کا خط۔رہ بڑھ جاتا ہے۔کشمش میں موجود اجزاءآنکھوں کو مضر فری ریڈیک۔لز سے ہونے والے نقص۔ان سے تحفظ دیتے ہیں جبکہ عمر بڑھنے کے ساتھ پٹھوں کی کمزوری، موتیا اور بینائی کی کمزوری سے تحفظ ملتا ہے۔

اور بلڈ پریشر کو قدرتی طور پر کم کرتا ہے۔ اسی طرح قدرتی فائبر شریانوں کی اکڑن کو کم کرتا ہے جس سے بھی بلڈ پریشر کی سطح میں کمی آتی ہے۔اس میں موجود کیلشیئم ہڈیوں کی صحت کے لیے فائدہ مند ہے جو ہڈیوں کی مضبوطی برقرار رکھنے میں مدد دیتا ہے۔پوٹاشیم سے بھرپور ہونے کی وجہ سے ان کا استعمال معمول بنانا گردوں میں پتھری کا خط۔رہ کم کرتا ہے۔کشمش ہڈیوں اور دانتوں کی صحت کو بہتر بنانے اور برقرار رکھنے کے لئے غذا میں ایک اچھا اضافہ ثابت ہوسکتی ہے۔ کیونکہ وہ کیلشیم سے بھرپور ہوتے ہیں ، جو ہڈیوں کے ٹشوؤں کے لئے ایک بہت اہم معدنیات ہے۔ اس طرح ، ہڈیوں کو مضبوط رکھنے کے علاوہ ، وہ آسٹیوپوروسس کے آغاز کو روکتے ہیں۔اس کے علاوہ ، کشمش میں ٹ۔ریس عنصر بھی ہوتا ہے ، جسے ب۔وران کہا جاتا ہے ، جو کیلشیم ، میگنیشیم ، فاسفورس اور وٹامن ڈی کو جذب کرنے میں مدد کرتا ہے

جو ہڈیوں کے پورے نظام کے ساتھ ساتھ اعصابی نظام کے لیے بھی ضروری ہے۔ اسی وجہ سے ، کشمش میں موجود بوران گٹھیا سے بچنے میں مدد کرسکتے ہیں ، اس بات کی تصدیق مطالعات سے ہوتی ہے۔ جس سے معلوم ہوتا ہے کہ اوسٹی۔و ارتھ۔رائٹس والے لوگوں میں اس کا سراغ عنصر بہت کم ہوتا ہے۔bکشمش گھلنشی۔ل اور ناقابل تحلیل ریشوں سے مالا مال ہیں۔ جو ملنے کی مقدار کو بڑھانے اور ان کو معتدل بنانے میں مدد کرتے ہیں آنت کے کام کو متحرک کرتے ہیں اور اس کے اخراج کو آسان بناتے ہیں۔ تاکہ اگر تھوڑی مقدار میں کھایا جائے تو وزن کم کرنے میں معاون ثابت ہوسکے۔اس خشک پھل کو پری بائیوٹک بھی سمجھا جاتا ہے ، کیونکہ یہ ٹارٹا۔رک ایس۔ڈ سے بھرپور ہوتا ہے ، ایسا ایسڈ جو آنتوں کے بیکٹیریا کے ذریعہ خمیر ہوتا ہے اور آنتوں کے کام کو بہتر بنانے میں مدد کرتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.