رات کو بیوی سے قربت کے فوراً بعد سحری کر سکتے ہیں؟

آج ایک سوال آ یا سوال یہ ہے کہ جنا بت یا احتلا م کی حالت میں ہو تو کیا اس حالت میں سحر ہو گی یا نہیں چلتے ہیں اس سوال کے جواب کی جا نب اس سوال کا جواب کچھ یوں ہے کہ جنا بت یا احتلا م سے سحری کا کوئی تعلق نہیں ہے بس اتنا ہے کہ کھانا کھانے سے پہلے وضو کر نا چاہیے کیونکہ

حدیث پاک میں آ تا ہے کہ اس کا وضو ٹوٹ گیا ہے اس لیے وضو کر لینا چاہیے اسی طرح ایک اور حدیث میں ہے حدیث میں ہے کہ اما عائشہ فر ما تی ہیں کہ نبی پاک ﷺ اور میں رات میں اُٹھتے تو جنا ب ت کی کیفیت میں ہو تے تھے۔ اور اسی کیفیت میں ہم روزہ رکھتے اور اس کے بعد غسل کر تے تو نبی پاک ﷺ اس کے بعد غسل کر تے اور پھر نماز پڑھتے۔ سحر کا کوئی تعلق جنا ب ت یا ا ح ت ل ا م سے نہیں ہے آپ نا پاک حالت میں ح ی ض ہ عورت کے لیے بھی یہی مسئلہ ہے ح ی ض ہ عورت بھی حالتِ ح ی ض میں تھی ح ی ض ختم ہو گیا اب سحر میں اٹھی ہے آرام سے سحری کر ے اور پھر غسل کر ے منی اگر جان بو جھ کر روزے میں نکلے تو پھر روزہ ٹوٹ جا ئے گا لیکن اگر بیماری سے نکلے پھر نہیں ٹوٹے گا لہٰذا یہ سوال بہت سے لوگ پوچھتے ہیں۔

کہ ا ح ت ل ا م کی حالت میں نا پاکی کی حالت میں اور صبح اُٹھے ہوئے ہوں اور سحر ہو تو کوئی مسئلہ نہیں ہے آپ سحری کر لیں اور بعد میں فجر سے پہلے غسل کر لیں روزے کا تعلق آپ کے غسل سے نہیں ہے لہٰذ ا آ پ کا غسل نہ ہونے سے کوئی مسئلہ نہیں ہے اور یاد رکھیں کہ جنا ب ت کی حالت میں روزہ رکھنا اس معاملے میں اُمت کا نظر یہ ایک ہی ہے اس میں کو ئی اختلاف نہیں ہے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو دین کی سمجھ عطا فر ما ئے اور اس کے مطا بق زندگیاں بسر کر نے کی توفیق عطا فر ما ئیں۔ صورت مسئولہ میں آپ کا روزہ تو ہوگیا، البتہ آپ نے جو نماز فجر قضا کی ، یہ گن اہ کبیرہ ہوا ، آپ نے اگر رات میں بیوی سے ہمبس تری کی تھی تو آپ کو صبح صادق سے پہلے یا کم از کم نماز فجر سے پہلے غسل کرکے مسجد پہنچ کر نماز فجرباجماعت ادا کرنا چاہئے تھا؛ لہٰذا آپ توبہ واستغفار کریں اور آئندہ اس طرح کے عمل سے پرہیز کریں جیسا کہ ہم سب ہی اس بات سے بہت ہی اچھے سے واقف ہیں کہ اسلام میں ہمارے لیے ہر قسم کی رہنمائی فراہم کی گئی ہے اگر ہم نے اپنی زندگیاں آسان بنانی ہیں تو ہمیں اس کے لیے اسلام ہمارے دین اسلام پر ہی عمل کر نا ہو گا۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *