دس سال سے اولاد نہیں تھی جمعہ کے دن یہ عمل کیا اللہ تعالیٰ نے جڑواں بیٹوں سے نواز دیا

جمعہ کے دن عصر کے بعد ایک تسبیح پڑھنے کا عمل ہے اور اس عمل کے حوالے سے بزرگان دین بتاتے ہیں۔ اور اس طریقے سے دعا کرنے سے اپنی جگہ سے اٹھتے ہی ہزاروں حاجات پوری ہوئی ہیں۔ جب بھی ایسا مسئلہ درپیش ہوا ہے۔ جس کے ساتھ انسان پریشان رہا ہے کہ اس کی دعاقبول نہیں ہورہی ۔

یا کسی قسم کامسئلہ ہے اس کی زندگی میں کوئی پریشانی ہے کوئی ایسی حاجت ہے جیسا کہ اولادکا مسئلہ ہے اسی طریقے سے گھر کی خواہش ہے۔ رزق میں برکت ہے۔ کسی اچھی جگہ روزگار کی تلاش ہے جا ب کا مسئلہ ہے۔ شادی اور رشتوں کے حوالے سے مسئلہ ہے۔ تو یہ عمل جو ہے بزرگان دین نے بتایا ہے صالحین نے اسی طریقے سے دعائیں کی ہیں۔ تواللہ پاک نے آسانیاں پیدا کیں ہیں۔ بے شک اللہ کی ذات ہے جودعائیں قبول فرماتی ہے۔ اس طریقے سے آپ دعا کریں اللہ تعالیٰ سے گڑ گڑا کر اپنی التجاء کریں۔ انشاءاللہ ! اولا د کا مسئلہ ہو، پریشانی ہو ہردعا کے لیے یہ عمل بہت ہی آزمودہ اور مجرب ہے۔ آپ ضرور عمل کریں۔ انشاءاللہ! آپ کی زندگی خوشیوں سے بھر جائے گی۔ یہ عمل ایک خاص آیت پر مشتمل ہے۔ اس کو اسم اعظم بھی کہتے ہیں۔ یہ عمل آپ نے جمعہ کے دن عصرکی نماز کے بعد کرنا ہے۔ آپ نے تسبیح کچھ اسطرح پڑھنی ہے کہ آپ نے اپنی جگہ سے اٹھتے ہی

انشاءاللہ ! اس طریقے سے پڑھنےسے آپ کی دعا قبول ہوجائے گی۔ اور آپ کی دلی خواہش پوری ہوجائے گی۔ کوئی پریشانی ہوگا، کوئی مسئلہ ہوگا، وہ ختم ہوجائیں گی۔ اور دعائیں قبول ہوجائیں گی۔ یہ موقع ہرگز ضائع نہ کریں۔ جو بھی مقصد ہوگا چاہے اولاد کا ہے یا کوئی اور ، انشاءاللہ پورا ہوگا۔ یہ عمل سورت انبیاء کی آیت ستاسی “لاالہ الاانت سبحانک انی کنت من الظلمین ” کا ہے۔ یعنی اے اللہ ! تیرے سوا کوئی معبود نہیں ہے۔ تو پاک ہے ۔ بے شک میں قصور وار ہوں۔ حدیث پاک میں آیا ہے جو کوئی مصبیت زدہ بارگاہ الہی ٰ میں ان کلمات سے دعا کرے تو اللہ تعالیٰ اس کی دعا ضرور قبول فرماتا ہے۔ آیت کریمہ وہ دعا ہے جو کبھی رد نہیں ہوتی ۔ ہمارے پیارے حضرت محمد ﷺ کا فرمان ہے حضر ت یونس ؑ نے مچھلی کےپیٹ میں یہ دعا کی تھی ۔ تیرے سوا کوئی عبادت کے لائق نہیں ۔ یقینا ً میں ہی ظالم ہوں۔ امام ترمذی اور دیگر محدثین نے ارشاد فرمایا: یہ دعا حضرت یونس ؑ نے مچھلی کے پیٹ میں کی تھی۔ جس کی برکت سے اللہ تعالیٰ نے انہیں اس کی آزمائش سے نجات عطافرمائی ۔ کوئی مسلمان مشکل میں اس آیت کو ور دکرے گا۔ تواللہ پاک اس کی دعا کوقبول فرمائے گا۔

اب اللہ تعالیٰ جیسے کسی بندے کو آزمائش میں ڈالتا ہے یا امتحان لیتاہے تو ہماری دعا ہوتی ہے یااللہ! ہم اس آزمائش سے نجات دے ۔ا ور سرخروفرمادے۔ ہم بے شک تیرے ماننے والے ہیں اور اس بات پریقین رکھتے ہیں کہ تو ہی عبادت کے لائق ہے کوئی نافرمانی کرتے ہیں۔ کوئی ایسے کام میں مبتلا ہوجاتے ہیں جو گن اہ میں آتا ہے یا کوئی ایسا کام ناپسند ہے ہم سے لاعلمی میں ہوگیا ہے۔ تو مع اف فرما دے ۔ ہمیں اس آزمائش سے نکال دے ۔ چاہے اولاد کی آزمائش ہے ۔مشکل ہے تنگدستی ہے توآپ یہ دعاضرور مانگا کریں۔ اور اللہ تعالیٰ کو راضی کیا کریں۔ اور اس آزمائش سے خلاصی کی دعا کیا کریں۔ جیسے اللہ تعالیٰ نے حضرت یونس ؑ کو آزمائش سے خلاصی دی۔اسی طریقے وہی ذات قادر ہے آپ کو بھی آپ پرآنے والی آزمائش سے خلاصی دے۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *