سحری کے وقت بس تین آیات پڑ ھیں۔ ہاتھ منہ پر پھیر لیں۔ باقی اللہ پر چھوڑ دیں۔

رمضان المبارک ماہ ِ سیام اپنی پوری رحمتوں اور بر کتوں کے ساتھ آ چکا ہے تو اس حوالے سے میں آپ کو ایک وظیفہ دینے لگا ہوں ہم نے آپ کو ماہِ رمضان کا چاند دیکھ کر جو عمل کرنے ہو تے ہیں وہ بھی بتائیں ہیں ہم نے آپکو۔ یکم رمضان المبارک کے وظائف بھی بتائے ہیں۔ آج ہم ایک ایسا خاص عمل لے

کر آ ئے ہیں ایک ایسا مجرب عمل لے کر آ ئے ہیں کہ جس کو اگر آپ کر یں تو اس کا کمال آپ خود دیکھیں گے اس عمل کو کرنے کی اجازت اگر آپ لینا چاہتے ہیں تو آپ نے توبہ کر نی ہے۔ رمضان المبارک خدا کی خاص رحمتوں کا مہینہ ہے جس میں انسان پر خدا کی خصوصی انعامات اور رحمتیں نازل ہو تی ہیں حدیث میں ہے ۔ جب رمضان آ تا ہے تو جنت کے دروازے کھول دئیے جا تے ہیں اور جہنم کے دروازے بند کر دئیے جا تے ہیں اور شیا طین جو ہیں وہ جکڑ لیے جا تے ہیں اس کے ساتھ ساتھ انسان جب بھی کوئی نیکی کر تا ہے تو اس کا اجر ستر گنا بڑھا دیا جا تا ہے تو جیسے ہی ہم قرآنِ پاک کا کوئی ایک سورۃ کوئی ایک حرف ادا کر تے ہیں اپنے منہ سے نکالتے ہیں تو اس کا اجر ہم خود نہیں جا نتے کہ ہمیں کتنا گنا

بڑھا کر ملتا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ آپ نے ایک بات ذہن میں رکھنی ہے کہ جب آپ کوئی عمل کر یں کسی مقصد کے لیے کوئی بھی وظیفہ پڑھ رہے ہوں تو آپ نے اتنی آواز میں پڑھیں کہ آپ کی آواز جو ہے۔ وہ آپ کے کانوں تک پہنچے۔ جب آپ کی آواز آپ کے کانوں تک نہیں پہنچے گی تو آپ کو پتہ نہیں چلے گا کہ آپ کیا پڑھ رہے ہیں۔ وظیفہ کر تے ہیں تو اس کے ساتھ ساتھ جو اثر دنیاوی ملتا ہے وہ تو ملتا ہے اس کے ساتھ جو ہمارا آخرت کا سا مان ہے جو نیکیاں ہیں جو قرآنِ پاک کی سورتوں کو پڑھنے کا ثواب ملتا ہے اس کا اگر ہم اندازہ لگا نا چاہیں تو نہیں لگا سکتے ۔ یہ جو عمل سورۃ

کوثر کا عمل ہے بہت چھوٹی سی سورۃ ہے تین آ یات کی اس کا عمل کر نا ہے صبح سحری کے وقت آپ نے یہ عمل کر نا ہے۔ عمل بتانے سے پہلے میں درخواست کر وں گا کہ اس بات کوآگے تک پہنچا ئیں تا کہ دوسرے لوگو ں کا بھی بھلہ ہو اور وہ بھی اس کا فائدہ اٹھا سکیں۔ ایک بار اول آخر درودِ ابراہیمی پڑھ لینا ہے اور اس کے بعد آپ نے تین مر تبہ سورۃ کوثر کی تلاوت کر لینی ہے آپ جانتے ہیں کہ سورۃ کوثر تین آیات کی سورۃ ہے اور قرآنِ پاک کی سب سے چھوٹی سورۃ ہے اور اس کو پڑھنے میں کوئی اتنا ٹائم نہیں لگتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.