یہ موقع ہاتھ سے نہ جانے دنا جو چاہو اللہ سے مانگ لو

رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جب رمضان کی پہلی رات ہوتی ہے تو شیاطین اور سرکش جن قید کردیے جاتے ہیں، اور دوزخ کے دروازے بند کردیے جاتے ہیں، پس اس کا کوئی دروازہ کھلانہیں رہتا، اور جنت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں، پس اس کاکوئی دروازہ بند نہیں رہتا، اور ایک منادی کرنے والا (فرشتہ) اعلان

کرتا ہے کہ : اے خیر کے تلاش کرنے والے! آگے آ، اور اے شر کے تلاش کرنے والے! رُک جا اور اللہ کی طرف سے بہت سے لوگوں کو دوزخ سے آزاد کردیاجاتا ہے، اور یہ رمضان کی ہر رات میں ہوتا ہے۔رسو ل اللہ ﷺ نے شعبان کے آخری دن خطبہ میں فرمایا : اے لوگو! تم پر ایک بڑی عظمت والا، بڑا بابرکت مہینہ آرہا ہے، اس میں ایک ایسی رات ہے جو ہزار مہینے سے بہتر ہے، اللہ تعالیٰ نے تم پر اس کاروزہ فرض کیا ہے، اور اس کے قیام (تراویح) کو نفل (یعنی سنتِ مؤکدہ) بنایا ہے، جو شخص اس میں کسی بھلائی کے (نفلی ) کام کے ذریعہ اللہ تعالیٰ کا تقرب حاصل کرے، وہ
ایسا ہے کہ کسی نے غیر رمضان میں فرض ادا کیا۔ اور جس نے اس میں فرض اداکیا، وہ ایسا ہے کہ کسی نے غیر رمضان میں ستر فرض اداکیے۔ یہ صبر کا مہینہ ہے ،اور صبر کا ثواب جنت ہے، اور یہ ہمدردی و غم خواری کامہینہ ہے، اس میں مؤمن کا رزق بڑھادیا جاتا ہے۔ اور جس نے اس میں کسی روزہ دار کا روزہ افطار کرایا تو وہ اس کے لیے اس کے گن اہوں کی بخشش اور دوزخ سے اس کی گلوخلاصی کا ذریعہ ہے، اور اس کو بھی

روزہ دار کے برابر ثواب ملےگا، مگر روزہ دار کے ثواب میں ذرا بھی کمی نہ ہوگی۔ ہم نے عرض کیا: یا رسول اللہﷺہم میں سے ہر شخص کو تو وہ چیز میسر نہیں جس سے روزہ افطار کرائے؟ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: اللہ تعالیٰ یہ ثواب اس شخص کو بھی عطا فرمائیں گے جس نے پانی ملے دُودھ کے گھونٹ سے، یا ایک کھجور سے، یا پانی کے گھونٹ سے روزہ افطار کرادیا،اور جس نے روزہ دار کو پیٹ بھر کر کھلایا پلایا اس کو اللہ تعالیٰ میرے حوض (کوثر) سے پلائیں گے جس کے بعد وہ کبھی پیاسا نہ ہوگا،یہاں تک کہ جنت میں داخل ہوجائے(اور جنت میں بھوک پیاس کا سوال ہی نہیں) یہ

ایسا مہینہ ہے کہ اس کا پہلا حصہ رحمت، درمیان حصہ بخشش اور آخری حصہ دوزخ سے آزادی (کا ) ہے اور جس نے اس مہینے میں اپنے غلام (اور نوکر) کا کام ہلکا کیا ، اللہ تعالیٰ اس کی بخشش فرمائیں گے، اور اسے دوزخ سے آزاد کردیں گے۔آج کا وظیفہ جب رمضان المبارک کا اعلان ہوجائے کہ صبح پہلا روزہ تو کسی سے بات کیے بغیر سب سے پہلے یہ عمل کرنا ہے ۔ مغرب کی نماز پڑھنے کے بعد اول وآخر 11مرتبہ درود پاک پڑھنا ہے۔ 15مرتبہ سورۃ اخلاص پڑھنی ہے ۔3مرتبہ معوذتین پڑھنے ہیں۔سورۃ الفلق اور سورۃ الناس کو معوذتین کہتے ہیں ۔ پھرسجدے میں جاکر 30مرتبہ ایاک نعبدُوایاک نستعین پڑھنا ہے ۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *