ہر بیماری سے آرام ملے گا شفاء کا انو کھا ذکر

آج میں آپ کو منگل کے روز کا وظیفہ بتانے لگی کہ جس وظیفے کے استعمال سے جس وظیفے کےکرنے سے بہت سی بر اکات سے مالا مال ہو سکتے ہیں اور ہر بیماری سے شفا یاب ہو سکتے ہیں جیسا کہ ہم سب لوگ ہی جانتے ہیں کہ ہر کوئی اپنی بیماری سے شفا یاب ہو نا چاہتا ہے کون نہیں چاہتا

کہ وہ اس کی بیماری سے نکل آئے ۔ ہر کوئی یہی چاہتا ہے کہ پہلے تو اس کو کسی بھی قسم کی کوئی بیماری نہ ہو اور اگر کوئی بیماری ہو بھی صحیح تو اس بیماری کو دور کرنے کے لیے بھی ایسے پاک وظائف ہیں جو ہماری تمام اقسام کی بیماریوں کو دور کر سکتے ہیں۔ اور یہ ایک ایسا وظیفہ ہے کہ جس کے کرنے سے ستر ہزار فرشتے اجر و ثواب لکھیں گے۔ اس وظیفے کے کرنے کا پہلے تو بہت ہی زیادہ اجرو ثواب ہے اور اس کے بعد تو یہ کہ اس وظیفے کےکرنے کےبہت ہی زیادہ اجر و ثوا ب ہونے کے ساتھ ساتھ اس وظیفے کو کرنے والا بہت سی بیماریوں سے شفا حاصل کر سکتا ہے۔ آج جو وظیفہ لے کر حاضر ہوئی وہ منگل کے دن کے حوالے سے ہے انشاء اللہ اس میں منگل لے کچھ فضائل کہ اس دن میں اللہ نے کس چیز کو پیدا فر ما یا اس دن کے فوائد یا فضیلت کیا ہے اس دن کے نفافل اور رات میں جو نفافل ادا کرنے ہیں انشاء اللہ وہ ذکر کروں گی تا کہ اس دن سے مکمل طور پر مستفید ہو سکیں اور اس دن کو اس طرح سے گزار سکیں کہ جس طرح نبی کریم ﷺ نے گزارنے کا حکم فر ما یا ہے۔ ا

ور اس کے علاوہ اس دن کے جو نفافل ہیں ان کو کیسے ادا کر نا ہے ان سب باتوں کو جاننے کے لیے میری باتوں کو غور سے سنیے گا تا کہ عمل کرنے میں کسی بھی قسم کا کوئی مسئلہ نہ درپیش ہو جائے آپ کو۔ ذکر کیا ہے کہ آج منگل کے دن کے حوالے سے وظائف ذکر کروں گی دن اور رات میں کون کون سے نفا فل ادا کرنے لیں اور سب سے پہلے منگل کے دن کا وظیفہ بیان کر وں گی۔ اس میں رونما ہونے والے واقعات ذکر کروں گی منگل کا دن یومِ امراض ہے اسی روز اللہ نے امراض کو پیدا کیا بیماریوں کو اللہ نے تخلیق فر ما یا جیسا کہ حدیث ابنِ مسعود میں ہے کہ اللہ تعالیٰ نے منگل کے روز امراض کو پیدا کیا اور اللہ نے منگل کے دن ابلیس شیطان کو زمین کی طرف اتا را اور اسی دن جہنم کو پیدا کیا اور اسی دن مالک الموت کو مخلوق پر حاوی کیا اور اسی دن سیدنا موسی اور سید نا عمر نے وفا ت پائی۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *