ایک چھوٹی سی سورۃ ایک مرتبہ دن میں پڑھ لو

یہ ایک ایسا وظیفہ ہے ۔ یہ ایک ایسا عمل ہے جس کو آپ کر کے انشا ء اللہ ارب پتی نہیں۔ کھرب پتی بن جائیں گے۔ بہت ہی پاور فل عمل ہے۔ جو بھی جس کو بھی میں نے آج تک بتا یا ہے ۔ اللہ نے اس پر کرم کیا ہے رزق کے دروازے کھو لے ہیں کیونکہ اس میں جو ہے یہ وظیفہ جو ہے وہ اس کا شانِ نزول بھی

بہت پیارا ہے۔ اس کے حوالے سے ہی نازل ہوا ہے تو انشاءاللہ وہ بھی ۔ وہ بھی شانِ نزول بھی آپ سے ذکر کروں گی اور اس آیت کا جو اس کا وظیفہ ہے۔ انشا ء اللہ تعالیٰ ویڈیو کو توجہ سے اور غور سے سنیے گا۔ انشا ء اللہ تعالیٰ چند ہی دنوں میں آپ کو ما ل دار بنا دیں گے ۔ کھرب پتی بنا دیں گے ۔ اللہ کے حکم سے ۔ جیسا کہ میں نے ذکر کیا کہ آج کا ذکر بہت ہی خاص ہے رزق کے حوالے سے ہے۔ ان پریشان لوگوں کے حوالے سے ہے جو رزق کی تنگی سے پریشان ہیں ۔ جو کہتے ہیں کہ کاروبار میں برکت نہیں ہے ۔ جو کہتے ہیں گھروں میں برکت نہیں ہے۔ جو کہتے ہیں مال میں برکت نہیں ہے۔جو کہتے ہیں پیسے میں برکت نہیں ہے۔ جو کہتے ہیں پیسوں میں برکت نہیں ہے۔ جو کہتے ہیں تنخواہوں میں برکت نہیں ہے۔ اصل چیز جو ہے وہ برکت ہے۔ انسان کے مال میں ، کاروبار میں، اس کے حالات میں۔ جو مین چیز ہے ، اس کے گھر میں وہ برکت ہے جس گھر میں بر کت آ گئی ۔ انشا ء اللہ چند روپیوں میں اللہ تعالیٰ اتنا کچھ بنا دیتے ہیں کہ لوگ دیکھ کر حیران ہوتے ہیں کہ ان کے پاس اتنا آ کیسے گیا۔ انشا ء اللہ تعالیٰ اس عمل

کو کرنے والے کے گھر میں بہت برکت ہو گی ۔ اللہ تعالیٰ چند دنوں میں ایسی برکت دیں گے جو کھرب پتی لوگوں کے پاس ہوتی ہے۔ اب کام بہت آسان سا ہے ۔ عمل بہت ہی مختصر سا ہے۔ وظیفہ بہت آسان سا ہے۔ کر نا آپ نے کیا ہے۔ اس وظیفے کو۔ اس عمل کو جمعرات کے دن سے شروع کر نا ہے ۔ آپ نے سورۃ طلاق بسمہ اللہ کے ساتھ پڑھنی ہے اور سورۃ طلاق پڑھنے کے ساتھ ساتھ آپ نے اول اور آخر گیارہ گیارہ مرتبہ درودِ ابراہیمی پڑھنا ہے ۔ پڑھتے پڑھتے جب آپ اس کی آیت نمبر تین پر پہنچیں گے۔۔۔۔ تو اس آیت کو آپ نے اکتالیس بار پڑھنا ہے۔ اکتا لیس مرتبہ پڑھیں گے ۔ انشا ء اللہ تعالیٰ فائدہ ہو گا۔ اور پھر ا س کے بعد اس سورۃ سے آ گے شروع کرنا ہے۔ اس کےبعد سورۃ آگے سے آ یت نمبر چار سے مکمل پڑھنی ہے اور اس کے بعد اللہ پاک سے رزق کی دعا کرنی ہے ۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *