بدترین دشمن بھی آپ کے پیروں میں گر کر معافی مانگے

محترم قارئین کرام السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ! سورہ کوثر ایک بہت بڑی فضیلت والی بڑی عظمت والی بڑی شان والی سورت ہے اس کے بہت سے وظائف ہیں یہ سورت اس وقت نازل ہوئی اس کا شان نزول یہ ہے کہ آپ ﷺ کو مشرکین مکہ نے کفار نے پریشان کرنا شروع کر دیا کہ آپ کی کوئی نرینہ اولاد

ہی نہیں ہے آپ دنیا س جائیں گے تو نام و نشان ہی مٹ جائے گا کوئی پوچھنے والا ہی نہیں ہو گا کیونکہ لوگ یہی سمجھتے ہیں کہ جس کی اولاد ہے اس کا نام باقی رہتا ہے تو ان کی تو اولاد ہے ہی نہیں تو آپ ﷺ دل میں ا بھی سوچ رہے تھے جبرئیل امین یہ سورۃ لے کر نازل ہوئے فرمایا انا اعطینٰک الکوثر بے شک اللہ نے آپ کو حوضِ کوثر عطا کیا۔یہ حوضِ کوثر کیا ہے؟جنت کے اندرا یک حوض ہے جس کا پانی دودھ سے زیادہ سفید،شہد سے زیادہ میٹھا ،آپ ﷺ نے فرمایا جو ایک مرتبہ پی لے گا وہ کبھی پیاسا نہیں ہوگا،جنت کے داخلے تک اسے پھر پیاس نہیں لگے گی۔ اللہ نے یہ نعمت آپ کو عطا فرمائی،وہ یہ کہنے لگے ان شانئک ھو الابتر شان یہ ہے کہ یہ تو ابتر کہتے ہیں جس کا کوئی نام لیوا ہی نہ ہو تو ان کا تو نام لینے والا نہیں ہوگا اور ساتھ یہ بھی بتا دیا فصلِ لربک وانحَر اپنے رب کے لئے نماز بھی پڑھتا رہ اور قربانی بھی کر یہ اللہ نے محبوب ﷺ کو حکم دیا ، اب یہ حکم صرف محبوب ﷺ کے لئے نہیں آپ ﷺ کی پوری امت قیامت تک آنے والے تمام بنی نوع انسان کے لئے حکم ہے کہ نماز بھی پابندی سے پڑھے اور قربانی کا عمل بھی کرے اور آپ کو یہ انعام عطا فرما دیا کہ اس سے آپ کی شان اور بڑھے گی آپ کی شان میں کمی نہیں آسکتی،آپ کے ساتھ اللہ کی مدد ہے ۔اب وہ دشمن ذلیل ہوئے،خوار ہوئے،ناکام و نامراد ہوئے،اب کوئی شخص ایسا جس کے دشمن اسے تنگ کررہے ہوں ایک ہو یا دو ہوں یا زیادہ ہوں اور اس کے پاس اتنی طاقت نہیں کہ ان کا مقابلہ کرے ان سے بدلہ لے سکے اتنی بھی طاقت نہیں وہ رکھتا بس وہ اللہ کی بارگارہ میں متوجہ ہو جائے گا،اس سورت کو تین سو تیرہ مرتبہ عشاء کے بعد یعنی رات کو سونے سے پہلے پہلے جب مرضی تنہائی میں بیٹھ کر پڑھے جہاں کوئی اسے ڈسٹرب کرنے والا نہ ہو پریشان کرنے والا نہ ہو۔

تا کہ کوئی تنگ نہ کرے اس کو بات چیت نہ کرے،اگر گھر میں یہ عمل کرتا ہے کہ گھر والوں کو سمجھا دے کہ میں اللہ کی بارگاہ میں اللہ کے ساتھ میرا تعلق ملا ہوا ہے اس دوران آپ مجھے پریشان نہ کرنا تو آپ نے پڑھنی کس انداز سے ہے اور کس طریقے سے ہے یہ سورت،چھوٹی سی سورت ہے ہر ایک کو یاد ہوتی ہے یہ سورت،یہ وظیفہ مرد بھی کرسکتے ہیں میری محترم مائیں بہنیں بھی کرسکتی ہیں لیکن طریقہ اچھے طریقے سے سمجھ لیں۔ہر بار آخری آیت کو تین بار دہرائی یعنی یہ دشمن کی بربادی کے لئے ہے اس کی ہلاکت کے لئے ہے اس طریقے سے آخری آیت کو تین مرتبہ پڑھیں،اسی طریقے سے تین سو تیرہ مرتبہ اس سورت کو پڑھنا ہے اور شرو ع میں اعوذ باللہ اور بسم اللہ یعنی تعوذ و تسمیہ پڑھ لیں ہر دفعہ تعوذ و تسمیہ پڑھنے کی ضرورت نہیں ہے تو اس طرح جب تین سو تیرہ مرتبہ پڑھ چکیں تو پھر اللہ کی بارگاہ میں دعا مانگیں اور آپ کے ذہن میں وہ دشمن ہوں گے ایک ہے یا ایک سے زیادہ ہے تنگ کر رہے ہیں پریشان کر رہے ہیں اس کا فائدہ یہ ہوگا کہ جو آپ کو تنگ کرنا چاہتا ہے پریشان کرنا چاہتا ہے۔

وہ خود ان مصیبتوں اور پریشانیوں میں مبتلا ہو جائے گا یا دوسرا یہ طریقہ ہو گا کہ اس کے ذہن سے آپ کا تصور نکل ہی جائے گا اور اللہ اس کو بھلا دیں گے اور معاملات کے اندر وہ پھنس جائے گا لیکن آپ کی جان اس سے چھوٹ جائے گی یہ عمل آپ نے مسلسل اکیس دن پابندی کے ساتھ کرنا ہے انشاء الہ مکمل طور پر آپ کی دشمنوں سے جان چھوٹ جائے گی۔جب یہ مکمل ہو جائے تو ذہن میں اس کا تصو ر رکھ کر اس کی طرف پھونک مار دیں یہ سمجھیں کہ اس کو سامنے بٹھا کر آپ نے یہ عمل کیا ہے اور پھر اس کی تباہی و بربادی کے لئے دعا مانگئے۔ انشاء اللہ اب آپ کی حفاظت اللہ کے ذمے ہوگی۔شکریہ

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.