’’ووٹ کو عزت دو‘‘ والے نوٹ کی طرف مائل ہو گئے،مریم نواز بلاول بھٹو اور مولانا فضل الرحمان کا بیانیہ مختلف ، حیران کن دعویٰ

لاہور(این این آئی) معاون خصوصی وزیر اعلیٰ پنجاب ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان سمجھتے ہیں مہنگائی تحریک انصاف کی حکومت کیلئے سب سے بڑا چیلنج ہے۔ پی ڈی ایم نہ تین میں نہ تیرہ میں ، یہ ہمارے لئے چیلنج نہیں ہیں حکومت کو پاکستان ڈکیت موومنٹ سے کوئی خطرہ نہیں۔ وزیر اعظم عمران خان ۔وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار اپنی کارکردگی کے ساتھ صوبہ میں حکومت جاری رکھیں گے جبکہ وزیر اعلیٰ کی قیادت میں ہی انتظامیہ نے گڈ گورننس سے کارکردگی دکھانی ہے۔سینیٹ الیکشن میں اگر کوئی شخص کسی دوسری پارٹی میں

شامل ہو جاتا ہے اور سرعام ووٹ دیتا ہے تو اس کی سزا قانون میں درج ہے۔لیکن اگر کوئی خفیہ ووٹ دیتا ہے تو اسے جانچنے کا کوئی پیمانہ نہیں ہے اور نہ ہی اس کو مجرم ٹھہرایا جا سکتا ہے۔انتخابی عمل کو شفاف بنانے کیلئے بکرا منڈیاں بند کرنا آئین اور قانون کے تحت الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے۔ ووٹ کو عزت دینے کا نعرہ لگانے والے نوٹ کی طرف مائل ہو گئے ہیں۔ اگر وزیر اعظم پاکستان کسی بھی ادارے کی کمی کوتاہی کی نشاندہی نہیں کریں گے تو اصلاحات کیسے لائی جا سکتی ہیں۔ اداروں کو ان کی خامیاں بتانا اور ان پر چڑھائی کرنے میں فرق ہے۔وزیر اعظم پاکستان کو کرپشن روکنے کی آئینی طاقت حاصل ہے ۔اس وقت مریم، بلاول اور مولانا فضل الرحمان میں سے کسی ایک کا بھی بیانیہ دوسرے سے نہیں ملتا۔ کوئی استعفے کی بات کر رہا ہے تو کوئی لانگ مارچ اور کوئی تحریک عدم اعتماد کی بات کر رہا ہے۔ حکومت کو پتہ ہے کوئی ابو بچاؤ، کوئی کاروبار بچاؤ اور کوئی اثاثے بچاؤ مہم پر ہے۔ ان کو عوام کا درد نہیں ہے بلکہ ان سب کو اپنا ذاتی درد ہے۔ ان خیالات کا اظہار معاون خصوصی وزیر اعلیٰ پنجاب ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے لاہور پریس کلب میںخواتین کے عالمی دن کے حوالے سے خواتین صحافیوں کے اعزاز میں منعقدہ تقریب میں شرکت کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔معاون خصوصی نے کہا کہ میڈیا میں کام کرنے والی خواتین جہاد کر رہی ہیں کیونکہ حق کی راہ میں قلم اور زبان سے بھی جہاد کیا جا سکتا ہے۔مجھے خواتین صحافیوں پر فخر ہے اور خراج تحسین پیش کرتی ہوں۔ انہوں نے کہا کہ خواتین صحافیوں کے ٹرانسپورٹ کے مسائل حل کروائیں گے۔پنجاب حکومت پنجاب بنک سے ایم او یو سائن کرے گی تاکہ خواتین کو آسان شرائط پر سکوٹی یا کار مل سکے۔

پریس کلب میں جگہ مل جائے تو یہاں ڈے کیئر سنٹر بنانے کیلئے تیار ہیں۔معاون خصوصی نے کہا کہ پنجاب حکومت نے 16ورکنگ ویمن ہاسٹلز کو اپ گریڈ کیا ہے جبکہ 221 نئے ڈے کیئر سنٹرز بنا رہے ہیں اور حکومت ویمن ڈویلپمنٹ کمپلیس تعمیر کرنے جا رہی ہے۔معاون خصوصی نے کہا کہ اگر خواتین اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے ملازمت کا راستہ اختیار کریں تو اکثر ان کیلئے ماحول موافق نہیں ہوتا کیونکہ ہمارے معاشرتی رویے خواتین کی حوصلہ شکنی کرتے ہیں ۔ خاتون گھر سے لے کر دفتر تک پل صراط سے گزر کر جاتی ہے اور راستے میں اس کے ذہن میں یہی بات ہوتی ہے کہ اسکے پاس غلطی کی گنجائش نہیں۔ خواتین کو بیچارگی، صنف نازک اور کمزور ہونے کے تاثر سے باہر نکلنا چاہئے۔ ڈاکٹر فردوس نے کہا کہ بیس سال سے زائدعرصہ سیاست کے میدان میں مجھے تلخ رویوں ،سازشوں اور تلخ حقیقتوں کا سامنا رہا۔ لیکن اس کے باوجود مرد کی پارٹنرشپ معاشرے میں توازن رکھنے کیلئے بہت ضروری ہے۔ مرد کو باپ کی شکل میں، بھائی کی شکل میںاور شوہر کی شکل میں خواتین کو حوصلہ دینا چاہئے اور اس کی جدوجہد میں حصہ دار بننا چاہئے۔ جو خواتین اس نظام کو للکارتی ہیں اور اپنی صلاحیتوں پر بھروسہ کرتی ہیں تو کوئی وجہ نہیں وہ اپنی منزل پرنہ پہنچیں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.