”ایک دن بشریٰ بیگم نے وزن کیا تو ۔۔۔“ عمران خان نے ایسی بات بتا دی کہ ہر کوئی ہنسنے لگا

وزیراعظم عمران خان نے عوام سے ٹیلی فونک بات کر تے ہوئے ایک سوال پر وزن بڑھنے کا اعتراف کرلیا ۔وز یر اعظم سے سوال و جواب کے سیشن کے دوران ایک کالر نے صحت کے حوالے سے سوال کیا تو انہوں نے کہا کہ جب میں کرکٹ کھیلتا تھا تو تب میرا وزن کبھی بھی 185پاونڈ سے

اوپر نہیں گیا،ابھی بشریٰ بیگم نے ویٹ مشین پر میرا وزن چیک کیا تو یہ اب 200پاونڈ تک پہنچ گیا ہے ۔ان کا کہنا تھا کہ جب میں کرکٹ کھیلتا تھا تو باقاعدگی سے ایکسر سائز کرتا تھا اب مجھے آٹھ آٹھ گھنٹے کرسی پر بیٹھ کر کام کرنا پڑتا ہے اس لیے ایکسر سائز کا وقت کم ملتا ہے ۔وزیراعظم نے کہا کہ انسانی جسم اللہ کی نعمت ے ،اگر ہم اس نعمت کا خیال رکھیں گے تو جسم کو بیماری نہیں ہوگی ،اگر کوئی ایکسر سائز نہیں کرے گا اور کھانا کھاتے ہوئے اپنے جسم کا خیال نہیں رکھیں گے تو مسئلے مسائل پیدا ہونگے ۔ وزیراعظم عمران خان نے اپوزیشن کے بارے میں دلچسپ مثال دیتے ہوئے کہا ہے کہ گیڈر کی موت آتی ہے تو وہ شہر کی طرف دوڑتا ہے، ایسے ہی اپوزیشن نے فارن فنڈنگ کیس میں پھنس چکی ہے۔ فارن فنڈنگ کیس کر انہوں نے خود کو مصیبت میں ڈال لیا ہے۔عوام

کےساتھ سوال و جواب کے سیشن میں وزیراعظم نے شہری کے فارن فنڈنگ سے متعلق سوال کے جواب میں کہا کہ وہ پاکستان کے واحد فنڈ ریز ہیں جو شوکت خانم اور نمل یونیورسٹی کے لیے آج بھی سب سے زیادہ اکٹھاکرتے ہیں۔ ہماری پارٹی واحد پارٹی ہے جس نے سیاسی فنڈ ریزنگ کی، ہم نے 40 ہزار ڈونرزکے ٹیلی فون نمبرز کے ساتھ عدالت میں جمع کرائے ہیں۔ چیلنج کرتا ہوں کہ یہ 100 ڈونرز کے نام ہی جمع کرادیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ انہوں نے قبضہ گروپوں کو پال رکھا تھا جو ان کے جلسوں کو فنانس کرتے تھے، ان کے جلسوں میں قیمے والے نان بھیجتے تھے۔ وہ غریب لوگوں کی زمینوں پر قبضہ کر لیتے تھے۔ ہم ان قبضہ گروپوں کےپیچھے جارہے ہیں اور ان کا خاتمہ کر کے چھوڑیں گے۔انہوں نے مزید کہا کہ الیکشن کمیشن سے اپیل ہے کہ وہ جلد فارن فنڈنگ کیس کا جلد سے جلد فیصلہ کرے۔ کیا مولانا فضل الرحمان بتا سکتا ہےکہ اس نے اتنی سےپارٹی کی فنڈنگ کیسے کی ہے؟

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.